اللہ اکبر، اللہ اکبر! آرمینیا کے زیر قبضہ علاقوں کو آزاد کروانے کے بعد آذربائیجان کے فوجیوں کا اذان دے کر فتح کا اعلان - Roznama Punjab

تازہ ترین

Home Top Ad

Post Top Ad

Your Ads Here

بدھ، 7 اکتوبر، 2020

اللہ اکبر، اللہ اکبر! آرمینیا کے زیر قبضہ علاقوں کو آزاد کروانے کے بعد آذربائیجان کے فوجیوں کا اذان دے کر فتح کا اعلان


اللہ اکبر، اللہ اکبر! آرمینیا کے زیر قبضہ علاقوں کو آزاد کروانے کے بعد آذربائیجان کے فوجیوں کا اذان دے کر فتح کا اعلان

آذری فوج کی جانب سے نگورنو کاراباخ کے علاقے میں مسلسل پیش قدمی کا سلسلہ جاری، آرمینیا کی فوج بھاری جانی و مالی نقصان کے بعد کئی محاذ چھوڑ کر فرار ہو چکی


باکو(روزنامہ پنجاب تازہ ترین۔ 06 اکتوبر2020ء) اللہ اکبر، اللہ اکبر! آرمینیا کے زیر قبضہ علاقوں کو آزاد کروانے کے بعد آذربائیجان کے فوجیوں کا اذان دے کر فتح کا اعلان، آذری فوج کی جانب سے نگورنو کاراباخ کے علاقے میں مسلسل پیش قدمی کا سلسلہ جاری، آرمینیا کی فوج بھاری جانی و مالی نقصان کے بعد کئی محاذ چھوڑ کر فرار ہو چکی۔ تفصیلات کے مطابق آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان جاری جنگ ہر گزرتے دن کیساتھ مزید شدت اختیار کرنے لگی ہے۔

بتایا گیا ہے کہ دونوں حریف ہمسایہ ممالک کی فورسز کے مابین مزید شدید جھڑپیں ہوئیں۔ جھڑپوں کے دوران نگورنو کاراباخ کے اطراف کو بھی کافی زیادہ جانی نقصان ہوا ہے۔ ان جھڑپوں کے دوران آذری دستوں کی طرف سے نگورنو کاراباخ کے مرکزی شہر سٹیپاناکیرٹ پر بھی نئے حملے کیے گئے ہیں۔

(جاری ہے)




اب تک ہونے والی جھڑپوں میں آزربائیجان کو واضح برتری حاصل ہے۔


آذری فوج نگورنو کاراباخ کے کئی علاقوں کو آزاد کروا چکی ہے۔ جبکہ مقبوضہ علاقوں کو آزاد کروانے کے بعد آذری فوجیوں کی ایک ویڈیو بھی سامنے آئی ہے، جس میں فوجی اہلکار اپنے ملک کا پرچم لہرا کر، اذان دے کر فتح کا اعلان کر رہے ہیں:


دوسری جانب آذربائیجان کی وزارت دفاع کی جانب سے جاری تفصیلات کے مطابق اب تک آرمینیا کے 2 ہزار سے زائد فوجی غیر فعال، 130 ٹینکس، بکتر بند گاڑیاں، 200 سے زائد بھاری ہتھیار اور میزائل سسٹم تباہ کر ڈالے ہیں۔

جبکہ آرمینیائی فوج نے بھی آذربائیجان کی شہری آبادی پر میزائل داغے ہیں جس کے نتیجے میں بڑی تعداد میں شہری جاں بحق ہوئے۔ واضح رہے کہ نگورنو کاراباخ آذربائیجان کا علاقہ ہے جس پر آرمینیا نے مقامی قبائل کیساتھ مل کر 90 کی دہائی میں قبضہ کر لیا تھا۔ نگورنو کاراباخ کے کنٹرول کے حصول کیلئے آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان گزشتہ 3 دہائیوں کے درمیان کئی خونریز جنگیں ہو چکی ہیں۔

جبکہ اب دوبارہ سے شروع ہونے والی جنگ کو کئی برس کے دوران چھڑنے والی سب سے زیادہ شدت والی جنگ قرار دیا جا رہا ہے۔ اس جنگ کے دوران دہائیوں بعد پہلی مرتبہ آذربائیجان کی فوج نگورنو کاراباخ کے کچھ مقبوضہ علاقوں کو آزاد کروانے میں کامیاب ہوچکی ہے۔ جبکہ آذربائیجان نے جنگ بندی کے مطالبات پر واضح کیا ہے کہ یہ جنگ تب تک جاری رہے گی جب تک نگورنو کاراباخ کو آزاد نہیں کروا لیتے۔ 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Bottom Ad

YOUR AD HERE