غلط بیانی مہنگی پڑگئی ، ایس ایچ او کو عدالت میں ہتھکڑیاں لگ گئیں - Roznama Punjab

تازہ ترین

Home Top Ad

Post Top Ad

Your Ads Here

بدھ، 30 ستمبر، 2020

غلط بیانی مہنگی پڑگئی ، ایس ایچ او کو عدالت میں ہتھکڑیاں لگ گئیں


غلط بیانی مہنگی پڑگئی ، ایس ایچ او کو عدالت میں ہتھکڑیاں لگ گئیں

جمن کھوسو نے عدالت میں جمع کروائی گئی رپورٹ میں غلط بیانی سے کام لیا ، جج نے اظہار برہمی کرتے ہوئے گرفتار کرنے کا حکم دے دیا


نواب شاہ (روزنامہ پنجاب تازہ ترین۔ 30 ستمبر2020ء) صوبہ سندھ کے شہر نواب شاہ میں غلط بیانی کرنے پر ایس ایچ او کو عدالت میں ہتھکڑیاں لگاکر گرفتارکرلیا گیا ۔ اس حوالے سے تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ انسداد دہشت گردی کی عدالت میں زیر سماعت ایک مقدمے میں عدالت کی طرف سے ایس ایچ او سانگھڑ جمن کھوسو کو ایک نوٹس بھیجا گیا تھا جس کے جواب میں ایس ایچ او نے ایک رپورٹ جمع کروائی ، جس میں بعد میں ثابت ہوا کہ ان کی طرف سے غلط بیانی سے کام لیا گیا تھا ۔

بتایا گیا ہے کہ پیپلزپارٹی کی انتخابی ریلی پر فائرنگ کے حوالے سے ایس ایچ او نے عدالت میں غلط بیانی سے کام لیا تھا، جس پر عدالت کی طرف سے اظہار برہمی کیا گیا، اور انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج نے حکم دیا کہ ایس ایچ او جمن کھوسو کو ہتھکڑی لگاکر فوری جیل بھیجا جائے۔

(جاری ہے)




واضح رہے کہ سال2015ء میں پیش آنے والے ایک واقعے میں پیپلزپارٹی کی ایک انتخابی ریلی پر فائرنگ کی گئی، جس کے نتیجے میں 4 افراد قتل ہوگئے تھے۔


دوسری طرف وفاقی دارالحکومت اسلام آباد سے بھکاریوں کا ایک گروہ پکڑا گیا ، جس میں 8 پولیس اہلکار بھی شامل تھے ، اس حوالے سے سیکرٹری داخلہ برائے پارلیمانی امور شوکت علی نے بتایا ہے کہ بھکاریوںکا ایک گینگ پکڑا گیا ہے جس میں آٹھ پولیس اہلکار ملوث پائے گئے ۔ منگل کو قومی اسمبلی میں اسلام آباد میں گداگری کی بڑھتی ہوئی صورتحال پر توجہ دلاؤ نوٹس پیش کیا گیا ، سیکرٹری داخلہ برائے پارلیمانی امور شوکت علی نے کہاکہ یہ ایک سماجی برائی ہے اسلام میں بھی منع فرمایا گیا ،بھیک مانگنے والوں کے خلاف مجاہد فورس تشکیل دی ہے ، یہ فورس ان بھکاریوں کو پکڑ کر مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا جاتا ہے ،ان بھکاریوں خلاف ایف آئی آر درج کی جاتی ہے ، ایکٹ کے مطابق ان بھکاریوں کے خلاف تین سال سے کم سزا دی جاتی ہے ۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Bottom Ad

YOUR AD HERE